Home / Articles / فوج پر ہر الزام کیوں؟؟؟ تحریر نوید چوہان

فوج پر ہر الزام کیوں؟؟؟ تحریر نوید چوہان

کل کا سورج طلوع ہوتے ہی پاکستانی عوام اپنے مستقبل کا فیصلہ کرنے نکلے گی، ووٹ بلاشبہ قوم کی امانت ہے اور اس امانت کا استعمال ہر اس پاکستانی پر فرض ہے جو جمہوریت کی بالادستی پر یقین رکھتا ہے اور اپنی ووٹ کی طاقت سے ملک میں تبدیلی کا خواہاں ہے لیکن عدلیہ کے مخصوص جماعتوں کے خلاف فیصلوں پر کئی حلقوں کی جانب سے سوالات اٹھائے گئے ہیں کہ ان انتخابات میں اسٹیبلشمنٹ اپنی مرضی کے لوگ سامنے لانا چاہ رہی ہے۔ حال ہی میں جسٹس صدیقی کی جانب سے جو بیانات دئیے گئے ہیں وہ بھی اسٹیبلشمنٹ اور فوج کے ان انتخابات میں منفی کردار کی عکاسی کرتے ہیں۔ لیکن فوج کی جانب سے تمام الزامات کی تحقیقات کی پیشکش کے بعد لگتا ہے کہ فوج کو بدنام کرنے کی یہ سازش ناکام ہو چکی ہے۔ پاکستان میں ہر ادارہ اپنے دائرہ کار میں رہتے ہوئے پاکستان کی بہتری کے لیے کام کر رہا ہے اگر عدالتوں میں لگے مقدمات ن لیگ کے امیدواروں کے خلاف ہیں اور ان کے خلاف عدلیہ فیصلے سنا رہی ہے تو الزام فوج پر کیوں؟؟ کیا کسی بھی ملک میں سیاسی فیصلوں پر فوج کو مورد الزام ٹھہرایا جاتا ہے؟؟ جواب ہو گا نہیں لیکن یہاں میڈیا اور سوشل میڈیا کی بے لگامی اتنی بڑھ چکی ہے کہ ہر چیز کا الزام فوج پر۔ یہاں یہ امر بھی قابل غور ہے کہ فوج کو نوازشریف کو راستے سے ہٹانے سے یا ان انتخابات میں جیسے کے بعض حلقے الزامات لگا رہے ہیں کہ عمران خان کو سامنے لایا جارہا ہے کی صورتحال سے کیا حاصل ہو گا۔ کوئی بھی ذی شعور اس کا جواب نہ دے پائے گا۔ میاں نواز شریف کی حکومت تھی تو یہ الزام لگا کہ وہ حکومت نہیں چلا رہے بلکہ کوئی اور فیصلے کر رہا ہے پھر ان کے خلاف عدالتی فیصلہ آیا تو الزام فوج پر، گرفتار ہوئے تو الزام فوج پر ، انتخابات میں کوئی بھی پارٹی جیتی تب بھی الزام فوج پر۔۔ پاکستان کہ موجودہ حالات میں میاں نوازشریف کابیانیہ اور پاکستان واپسی کا فیصلہ درست ہے لیکن پارٹی کی سیاست کو اور اپنی شناخت کو بچانے کے لیے، لیکن انھوں نے بھی الزام فوج پر دھر دیا کیونکہ پاکستان میں سب سے آسان کام الزام لگانا ہے ثبوت لانا نہیں ۔ میاں صاحب نے اگر کرپشن نہیں کی تو عدالت میرٹ کی بنیاد پر فیصلہ دے گی اور اگر کرپشن کی ہے تو سزا، ملک میں جاری ہر سازش کے تانے بانے فوج اور اسٹیبلشمنٹ سے جوڑے جاتے ہیں بوٹ کی حکمرانی کے طعنے دیے جاتے ہیں۔ فوج کا کردار پاکستانی سیاست میں کلیدی رہا ہے لیکن جنرل مشرف کے جانے کے بعد اس کردار کو خاصا محدود کر دیا گیا ہے۔ کیا انتخابات کے دوران رینجرز اور فوج کو پہلی بار تعینات کیا گیا ہے؟؟ جواب ہو گا نہیں تو اس بار واویلا کیوں؟؟ کل تک فوج کی نگرانی میں انتخابات کروانے کا مطالبہ کرنے والے آج فوج سے خائف کیوں ہیں۔ عوامی طاقت کے دعویدار اپنے عمل اپنی مقبولیت سے کیوں اقتدار حاصل نہیں کر سکتے۔ ناعاقبت اندیشوں کو شاید علم نہیں کہ پاکستان دہشتگردی کی گرے لسٹ میں آچکا ہے۔اور پاکستان کے خلاف بین الاقومی سازشوں کا سلسلہ بھی جاری ہے۔ بہت سے ایسے عناصر ہیں جو نہیں چاہتے کہ پاکستان میں جو امن کی فضاء پیدا ہوئی ہے اسے تسلسل حاصل ہو کبھی پشتون مارچ تو کبھی دارالحکومت میں نعرے بازی، کبھی فوج کو سوشل میڈیا پر گالیاں تو کبھی پارٹی بدل کر جانے والے کے پیچھے سازش کی بو، حالیہ انٹرنیشنل میڈیا کی شہ سرخیاں دیکھیں تو لگتا ہے کہ شاید پاکستان کی فوج کے خلاف ایک محاذ کھڑا کر دیا گیا ہے ۔ انٹرنیشنل میڈیا کیوں ہر وقت پاکستان کی صورتحال پر نظر رکھتا ہے؟؟ پاکستان میں مرنے والے گدھے سے لیکر بڑے واقعات تک ہر معاملے کو بڑھا چڑھا کر پیش کیا جاتا ہے۔ کیوں پاکستان ہر ایک کے لیے اہم ہے اس کا ایک ہی جواب ہے اور وہ ہے پاکستان میں ہونے والی حالیہ ترقی اور سی پیک منصوبہ جس میں پاکستانی فوج کا کردار نہایت اہم ہے۔ چاہے وہ لاجیسٹک ہو یا سیکورٹی ہر چیز میں پاکستانی فوج نے لاکھوں جانوں کے نذرانہ پیش کیے ہیں تاکہ پاکستانی عوام کا مستقبل محفوظ ہو سکے۔ سی پیک کا منصوبہ اور چائنہ کا تعاون دیگر ممالک کو راس نہیں پڑوسی ملک کی پاکستان میں جاری کئی سازشیں بے نقاب ہوئی ہیں ایسے میں فوج پاکستان کی اندرونی و بیرونی سازشوں کا مقابلہ کر رہی ہے۔جنرل باجوہ کے طرز عمل سے کہیں نہیں لگتا کہ انھیں اقتدار کی خواہش ہے۔ لیکن پاکستان اور انٹرنیشنلی ایسے عناصر موجود ہیں جو فوج اور اس کے سربراہ کے خلاف نفرت پھیلا رہے ہیں۔ جس کا محض مقصد پاکستان میں بے یقینی کی صورتحال پیدا کرنا ہے۔ عام عوام کو ایک ہی پیغام ہے کہ جب ووٹ کی طاقت آپ کے پاس ہے اور آپ اس سے تبدیلی لا سکتے ہیں تو اپنےمرضی کے امیدوار کے لیے باہر نکلیں منفی پروپیگنڈے کو بالکل خاطر میں نہ لائیں اور پاکستان اور اس کے مستقبل کو ووٹ دیں۔۔۔ پاکستان کو ووٹ دیں۔ افواج پاکستان پاکستان کی محافظ ہیں

About Tanveer Khatana

Check Also

کہانی زَر ،زن ،زمین کی

ارض پاک کی سیاسی صورتحال تیزی سے تبدیل ہورہی ہے، سیاست کی گرما گرمی کے …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *